Disable Screen Capture Jump to content
Novels Library Plus Launched ×
URDU FUN CLUB

(پیار پیار میں)


Recommended Posts

جی دوستوں کیا حال ھے ۔میری طرف سے سب کو عید مبارک ۔عید کے اس دن سے مین اک نیو کہانی کو شروع کرنے لگا ھوں ۔ سب دوستوں کی ہلیپ کی ضرورت ھے۔ شکریا۔ 

اور اپڈیٹ اج رات سے شروع ھو گی۔

Link to comment

اردو فن کلب کے پریمیم ممبرز کے لیئے ایک لاجواب تصاویری کہانی ۔۔۔۔۔ایک ہینڈسم اور خوبصورت لڑکے کی کہانی۔۔۔۔۔جو کالج کی ہر حسین لڑکی سے اپنی  ہوس  کے لیئے دوستی کرنے میں ماہر تھا  ۔۔۔۔۔کالج گرلز  چاہ کر بھی اس سےنہیں بچ پاتی تھیں۔۔۔۔۔اپنی ہوس کے بعد وہ ان لڑکیوں کی سیکس سٹوری لکھتا اور کالج میں ٖفخریہ پھیلا دیتا ۔۔۔۔کیوں ؟  ۔۔۔۔۔اسی عادت کی وجہ سے سب اس سے دور بھاگتی تھیں۔۔۔۔۔ سینکڑوں صفحات پر مشتمل ڈاکٹر فیصل خان کی اب تک لکھی گئی تمام تصاویری کہانیوں میں سب سے طویل کہانی ۔۔۔۔۔کامران اور ہیڈ مسٹریس۔۔۔اردو فن کلب کے پریمیم کلب میں شامل کر دی گئی ہے۔

  • Replies 52
  • Created
  • Last Reply

Top Posters In This Topic

Top Posters In This Topic

کہانی شروع کرتا ھوں 

میرانام سمیی ھے میں پنجاب کے اک عام سے شہر میں رہتا ھوں 

شہر کا نام نھیی لکھ سکتا ۔

کہانی کو ذیادہ لمبا نہیں لے کر جا سکتا ۔ 

اس کی وجہ ھے کہ پھر اپ کو بتاو گا۔ 

میں اج عید کے دن پاکستان سے باھرھوں۔ 

ملک سے باہر ہوتو اپنواپنوں  کی یاد تو اتی ھے نا ۔ دوستوں کواپنی کہانی کی طرف لے کر چلتا ہوں۔بات تب کی ھے جب میں9کلاس میں تھا ۔

میری عزیزوں کاگھر تھا ۔ 

ان کی پانج لڑکیاں تھی ۔ تین کی شادی ھو گی تھی جو باقی کی دو تھی وہ میری ھم عمر تھے۔

اک لڑکی جو کے عمر میں برابر تھی وہ مجھے لفٹ کروتی تھی ۔

میں نے بھی سوچا یہ لڑکی ھو کر اگر لفٹ کروا رہی ھے تو تم کےبھی اک چانس لینا چھیے ۔

میں بھی ان کے گھر جانا شروع ھو گیا۔

لکن اتنی جلدی ہمری قسمت میں پھدی نہئ لکھی تھی ۔ 

لیکن میں جب بھی جاتا ہر بار کچھ نا کچھ کر کے اتا تھا۔

کبھی کس کبھی گلے لگانا کبھی گانڈ میں انگلی کرنا ۔

ایک دن ان کے گھر کوہی بھی نہں تھا سب کس کام سے باھر تھے ۔ 

مجکو ایسے ہی موقع کی تلاش تھی۔

مجھ جب پتا چالا تو میں نے ادھر ہی پکڑ لیا۔

+#####+++++#####

جاری ھے

Link to comment

Uppdate 1

( جسیےہی میں نے پکڑا (سوری

لڑکی کا نام توبا تھا۔ 

توبا نے رونا شروع کردیا ۔ 

کہتی کہ میں تو اپ سے پیار کرتی ھوں۔

 

اپ میری عزت پر ھتھ ڈال رھے ھو ۔

 

میں تو سمجھ تم بھی مجھ پیارسے پیار کرتے  ھو 

میں نے دل میں کہا لو لگ گے لوڑے۔ 

میں تو اس کی پھدی کے لیا اس سے دوستی کی ھے ۔

اب کیا کروں۔

****#####* **

جاری ھے۔

 

Link to comment

توبا کی بات سن کر ایک بار تو مجھ پھدی اپنے ھاتھ سے نکلتی ہولگ رہی تھی۔ 

لکن جب مجھ اس بات کا خیال أیا کے دوستی کا ھاتھ تو اس نے ہی بڑیا تھا تو میرے دماغ میں اس بات کا خیال أیا کے کیوں نا اس پیار کا ہی سہارا لیا جاۓ۔

جو پیار یہ منگہ رہی ھے۔ 

میں نے بولا کیا ہو گیا ھے توبا تم کو میر ی محبت پر کوئ شک ھے۔ 

میں بھی تم سے بہت پیار کرتا ھوں۔

I love you.

اگر تم کو میری محبت پر کوئ شک ھے تو میں ابھی کے ابھی اپ کے گھر سے چالا جاتا ھوں۔ 

میں نے جان کر کچھ ایسی شکل بنا لی ۔

اور اس کے پاس سے اٹھ کر جانے لگا گیا۔

مجھ امید تھی کے توبا مجھ روک لے گی ۔ لیکن وہ تو کسیی گہری سوچ میں تھی ۔

میں اٹھ کر جا تو رہا تھا پر مجھ امید تھی ۔

جب میں دروازے کے پاس تھا تو مجھے لگن لگا کے مجھ واپس جاتا ھوں۔ 

اور جا کر توبا کی پھدی بجھا دتا  ہوں۔

لیکن میں ذبردستی کو اچھا نہیں سمجاتا۔

میرے سوچ کے مطابق اس لڑکی یا عورت کی پھدی لینے کا مزا ہی کچھ اور ھوتا ھے جو اپنی مرضی سے پھدی دے۔ 

میں دروازے میں ہی تھا اور ابھی یہ بات ہی سوچ رہا تھا کے مجھ اب کیا کرنا چھیا ۔

اچانک سے توبا أ کر مجھ سے لپٹ جاتی ھے۔ 

اور مجھ سے اپنا نے کی اور کبھی نا چھوڑنے کی قسموے اور وعدے کرتے ہوئ مجھ سے اپنی محبت کا اظہار کرتی ھوی مچھ کو پھر سے گھر کے اندر لے جاتی ھے۔

میں دل سے کچھ ڈر بھی رہا تھا کہ اب کیا ھو گا۔

لیکن جب انسان کو پھدی نظر اتی ھے تو اس کے پہلے یا بعد میں کیا ہو گا یہ کب سچوتا ھے۔ ۔

گھر کے اندر جا کر مجھ کو بٹھنا کے بعد توبا اٹھ کر کچن کے اندر چلی جاتی ھے۔

میں چارپائ پر بٹھانے کہ بعد یہ ہی سوچتا ھوں کہ اس کو اپنے نیچے کیسے لے کر انا ھے۔

توبا کی امی اور میری دور کی رشتہ در اچانک أ جاتی ھے ۔ مجھے دیکھ کر میر ے پاس ہی بیٹھ جاتی ھے ۔

سب گھر والوں کا پچھتی ھے ۔اور پھر اچانک سے توبا کو بولتی ھے کہ میر ی بات سنو ۔

جب توبا اتی ھے تو اس کہ ہاتھ میں چاے کہ کپ لے کر أ رہی تھی ۔ 

جی امی جی أپ نے بلایا تھا۔ 

میں نا یہ ساتھ والی ہمسا ۓ کے ساتھ بازار جا رہی ھوں۔

باہر کا دروازہ لگا لو اور مجھے بھی ساتھ لے کر جانا چہھ رہی تھی۔ 

میں نے کچھ بہانا لگا دیا اور توبا کہ پاس ہی روک گیا۔

توبا کہ بارے میں کچھ بتا دو۔

32/28/34 

کمال کا فگر تھا کیا بولو اب ۔ 

قد بھی 6 فٹ کے قریب تھا۔میں تو اس کے قدکی وجہ سے دوستی کی تھی 

****#####*****

جاری ھے

Link to comment

اپڈیٹ

 

 توبا کو  میں

نے پیار سے اپنے نیچے لے کر انا ھے۔

یہ بات سوچتے ھوے میں نے توبا کو گلے سے لگا لیا۔

سارے منہ پر کس کی لیکن اب میری کوشسش کچھ اور تھی ۔

کچھ وقت گزرا تو میں نے کچھ کام کا بہانا بنا کر اپنے گھر واپس أ گیا۔

رات کو جب میں سونے لگا تو تب میں نے أگے کیا کرنا ھے اس بات کہ مطلق سچتا رھا۔

پھر کچھ ٹائم کے بعد میں اک بات پر 

راضی ھوا کہ اب کھیر ٹھنڈی کر کہ کھانی ھے۔

پھر کچھ دن تک میں توبا کہ گھر نہئ گیا۔

اور یہ ہی میر ا پلان تھا کہ اب توبا کہ دل میں اتنی تڑپا ڈالو گا کہ وہ اپنے أپ پھدی دے گی۔

پھر کچھ ٹامٔ کہ لیے مئں نے توبا کو اپنی ہٹ لسٹ سے نکال دیا۔

کیوں کہ میں اپی پڑھائی میں مصروف ہو گیا۔

 

کیؤں کہ انسان جب کس کام کو کرنے کا سوچتا ھے تو پھر اس کام کر ہی رہتا ھے ۔ 

امتحان کی تیاری میں اس طرح بزی ھوا کہ پھر کچھ بی یاد نا رھا۔ 

 

بہت ہی مشکل سے امتحان دیا اور پھر اس امید پر کہ اب توبا پر دل سے ٹرایٔ کرو گا۔ 

لیکن قسمت میں تو کچھ اور ہی لکھ تھا۔ 

میرے گھر کی بیک سایٔڈ پر جو گھر تھا ۔ 

اس میں نیو کرایا دار رہنے کہ لیے أۓ۔

 اور۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر  وہ ھوا۔ جو  میں نے کبھی سوچا نا تھا۔

ایک نیو میرڈ کپل کراۓ پر رہنے کہ لیے أۓ۔ 

شادی کو ابھی کچھ ہی ماہ ھوۓ تھے۔

لڑکی کا نام پتا نہیں کیا تھا پر سب بانی کے نام سے پکارتے ھوۓ سنا ۔ 

لڑکی بہت پیاری تھی۔ 

قد کی نرامل تھی پر جسم بر ھوا تھا۔

اب میں توبا کو بھول گیا تھا اب میرا مشن تھا اس لڑکی کو لن کہ نیچے لے کر أنے کی۔

میری شروعات کچھ اس طر ح ھویٔ کہ میں چھت پر تھا اچناک ایک بہت ہی پیاری أواز  میرے کونوں کو سنئ دی۔ 

میں نے پلٹ کر دیکھا تو دیکھتا ہی رھا گیا۔ 

تیرے حسن کی کیا کرو میں تعریف۔

جب دیکھا تو کچھ بھی یاد نا رھا۔

 

 

 

 

 

*****######****

(جاری ھے)

Link to comment

اپڈیٹ

 

میں أواز سن کر اس کی طرف دیکھا اور اس کی بات سنن کے لے ان کی چھت کے پاس أ گیا۔ 

جی کیا بات ھے أپ نے أواز دی مجھ ۔

لڑکی۔۔سوری أپ کو ڈسڑب کیا ۔

بات یہ تھی کہ میرے ہسبنڈ گھر پر نہی ھیی۔ 

اور مجھ ڈر لگ رہا ھے کیا أپ میرے ساتھ میرے گھر پر أ سکتے ھو پلیز منا نا کرنا۔ 

ٹھیک ھے چلو میں ابھی أتا ھوں۔ 

لڑکی۔۔ نہیی اپ ساتھ ہی چلو ۔

میں۔۔کچھ پرشان بھی ھوا کہ اس کو کیا پرشانی ھے جو یہ ایک انجان لڑکے کو اپنے گھر بلا رہی ھے۔ 

پھر دل میں سوچا جو ہو گا دیکھ لوں گا۔ 

جی چلو میں أپ کےپچھے أتا ھوں۔ 

لڑکی کچھ ڈر ی ھویٔ لگ رہی تھی۔ 

بولتی ھے  أپ کہ ساتھ جانا نہیی تو میں ادھر ہی ھوں ۔

پھر میں لڑکی کہ ساتھ اس کہ گھر أ گیا۔ 

لڑکی۔۔ جی بات یہ ھے کہ میں کچن میں کام کر رہی تھی کہ اچانک ایک ۔۔

اتنی بات کرنے کہ بعد وہ پھر سے چپ کر گی۔ 

جی بولو کیا بات ھے میں اپ کی کیا مدد کر سکتا ھوں۔

لڑکی ۔۔۔ بات یہ کہ کچن میں کوکورج ھے اور مجھ کوکورج سے بہت ڈر لگتا ھے۔ 

بات سن کر میں اپنی ہنسی پر کنڑول نا رکھ سکا اور اتنا ھنسا کہ لڑکی کو مجھ پر بہت غصہ چڑ گیا ۔اور وہ مجھ مارنے کہ لیی میری طرف بڑھی رہی تھی ۔ مجھ اس کہ منہ سے پتا چل گیا کہ اس کو غصہ چڑھ گیا ھے۔ میں بھی اپنے أپ کو بچنے کہ لیے باگھا اب میں أگے أگے اور وہ میر ے پیچھا ۔ 

تھوڑی سی بھاگ دوڑ کہ بعد میں ان کہ بیڈ روم میں أ گیا لکن وہ میرے پچھے ہی تھی ۔

روم میں أنے کہ بعد میں کچھ سلو ھو گیا کیوں کہ اب میں اس سے سوری کر کہ بات کو ختم کرنا چھا رھا تھا ۔

اس لیے میں بیڈ کہ پاس روک گیا ۔

اور وہ لڑکی ابھی بھی میری طرف ہی أ رہی تھی۔ 

میرے پاس أ کر مجھ مارنے کہ لیے اس نے ھاتھ اوپر کیا تو میں نے اس کہ ھاتھ پکڑ لیا۔ لیکن اس میں اتنا غصہ أیا ھوا تھا کہ وہ زور لگا رہی تھی۔

اس سب زور ازمیں اچانک میرے بلینس بگڑہ اور بیڈ پر گر گیا۔ 

میں نے گرنے سے بچنے کہ لڑکی کو پکڑا تو وہ بھی ساتھ ہی بیڈ پر میرے اوپر ہی گر گی۔ 

اب پوزیشن یہ تھی میں نے اس کہ دونوں ھاتھ پکڑے ھوے تھے اور وہ مجھ مرنے کہ زور لگا رہی تھی۔ 

اس مستی میں لن صاحب اپنی مستی میں لگے ھوے تھے ۔

اب وہ جب بھی زور لگتی اس کی پھدی لن پر رگڑتی۔

اس کا تو پتا نہی لکن میں تو کافی مزہ میں تھا۔

۵ ۱۰ منٹ ایسے ہی گزر گے۔

اب وہ اپنے ھاتھ نہی حالے رہی تھی۔ بس اس کی پھدی لن پر رگڑ رہی تھی۔ 

ھم دونوں کو پاتا تھا کہ کیا ھو رھا ھے۔ لکن دونوں ہی مزہ لے رہے تھے اور خاموش تھے ۔اچانک اتنی زور سے میری ساتھ لگی کہ کیا بولو أپ کو۔

(وہ تو بعد میں پتا چلا کہ اس مستی میں وہ فارغ گی تھی) 

حا ل تو میرے بھی بورے ہی تھے۔ 

فارغ ھونے کہ بعد وہ وہاں  سے اٹھ کر باہر چلی گی ۔ اور میں اپنا لن ھاتھ میں لیے ۔اس کی بڑی سی گانڈ دیکھتا رھا 

پھر کچھ ٹامٔ بعد میں بھی باہر أ گیا۔

کچھ پل بعد وہ بھی أ گی۔ 

اب ھم دونو ں ہی چپ تھے۔۔

پھر میں نے ہمت کر کہ بات شروع کی۔ 

کدھرے ھے کوکورج جسکی سے أپ ڈر رھی تھی۔

وہ کچھ نا بولی۔ 

میں اپنے اپ ہی کچن میں گیا ۔

کچھ بھی نہی تھا۔ 

واپس أ کر اس لڑکی کو بتا کہ اب کچھ بھی نہی ھے اپ کچن میں اپنا کام کر سکتی ھو۔

 

اب میں جا رہا ھوں۔

لڑکی کہ پاس سے گزرتے ھوے۔

پھر بھی کبھی کویٔ کوکورج تنگ کر تو بولنا میں پھر بھی أ جاوا گا۔

****######***

جاری ھے

Link to comment
×
×
  • Create New...